ابھی آنے والا ہے Sun 6:00 PM  AEDT
ابھی آنے والا ہے شروع ہوگا 
Live
Urdu radio
ایس بی ایس اردو

’ جب تاج اچھالے جائیں گے‘

Source: Al Jazeerah

پاکستان میں پچھلے دنوں طلبہ تنظیموں کی بحالی کے حق میں مظاہروں میں ایک بار پھر ایسے اردو اشعار کی گونج سنائی دی جو اکثر مظاہروں میں جوش و خروش بڑھانے کے لئے استعمال ہوتے ہیں۔ بھارت میں شہریت قوانین کے خلاف جاری حالیہ مظاہروں میں بھی انقلابی شاعری اور نظموں نے مظاہرین کے جذبات کی نمائندگی کی ہے۔ برصغیر پاک و ہند میں احتجاجی اور انقلابی شاعری کا سیاسی تحریکوں میں استعمال لگ بھگ ایک صدی پر محیط ہے۔

اردو کے عظیم مزاحمتی شاعروں میں علامہ سر محمد اقبال،  الطاف حسین حالی، شبلی نعمانی،  ساحرؔ لدھیانوی،بسمل، حبیب جالبؔ، فیض احمد فیضؔ ، جوش ملیح آبادی ،  برج نرائن چکبست سمیت  کئی سو نا معلوم و گمنام شعرا شامل ہیں جن کے اشعار نے ہندوستان کی آذادی سے لے کر آج تک اپنے انقلابی شعروں سے اپنے   اپنے ادوار میں بغاوتوں، شورشوں اور حقوق کے لئے اٹھنے والی آوازوں کا ساتھ دیا ہے۔

REVOLUTION
national archive of Pakistan

اردو شاعری ہر دور میں آذادی اور جمہوری تحریکوں کے دوران عام آدمی کے جذبات ، جوش اور ولولے کو بڑھانے میں ہراول دستہ بنتی رہی ہے۔  اگر ایک طرف  اسی طرح کے  انقلابی اشعار  پاکستان میں پچھلے دنوں طلبہ تنظیموں کی بحالی کے حق میں مظاہروں کے دوران سنائی دئے تو دوسری طرف  بھارت میں شہریت قوانین کے خلاف جاری حالیہ مظاہروں میں بھی انقلابی اشعار نے عوامی مہیم  کو مہمیز کیا ۔پچھلے سال لاہور مین فیض میلے کے باہر مظاہرے میں طلبا و طالبات نے بسمل عظیم آبادی کی معروف نظم کے اشعار ’سرفرشی کی تمننا اب ہمارے دل میں ہے کو نعروں کا رنگ دے کر سوشل میڈیا پر دھوم مچائی تو بھارت میں شہریت کے قوانین کے خلاف احتجاج میں  پاکستان میں جنرل ضیا کی فوجی آمریت کے دنوں میں مقبول ہونے والی فیض کی نظم’ لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے‘نے بھی تند و تیز  بحث  کو جنم دیا۔ اس سے پہلے پاکستان میں حبیب جالب کی شاعری نے فوجی آمر ایوب خان کے خلاف عوامی احتجاج میں اہم کردار ادا کیا۔ اس کے علاوہ ترقی پسند شعرا اور ادیبوں میں فیض، فراز،  کیفی اعظمی، علی سردار جعفری، امرتا  ۔پریتم  راجندر سنگھ بیدی،  نے نئے لہجے میں بات کی جب کہ ان میں سے کئی شعرا اور ادیب جیل بھی گئے۔۔ اسی طرح انیس سو ستتر میں بھٹو کے خلاف چلنے والی تحریک میں بھی  اشعار  کا استعمال رہا۔ تحریک پاکستان  میں بڑے بڑے جید شعرا لیڈر کے طور پر سامنے آئے جن مٰن علامہ اقبال اور ظفر علی خان جیسے شعرا بھی شامل تھے۔

تاریخی کے صفحات پلٹ کر پیچھے دیکھیں تو  ہندوستان کی تحریک آذادی میں الطاف حسین حالی نے نظم ’حب وطن‘ سے جرات مندانہ شاعری کا علم بلند کیا۔ جس کے بعد شبلی ،  اقبال،  ساحرؔ ،بسمل، جوش ، چکبست ، درگاہ شاہی، ظفر علی خان، حسرت موہانی، برج نرائین، سمیت کئی سو معروف و گمنام  شعرا انگریزوں سے آزادی کی اس تحریک کی آواز بنتے رہے۔  اسی دور میں حسرت موہانی کی معروف نظم ’ انقلاب زندہ باد‘ آذادی کا ترانہ بن گئی تھی۔ برصغیر کی آذادی کے بعد بھی ترقی پسند تحریک سے متاثر شاعری غمِ جاناں سے ہٹ کر غمِ دوراں کو موضوع  کو شعر و سخن بناتی رہی۔ بھارت میں اردو شاعری سے نا بلد حلقے فیض  کی نظم ہم دیکھیں گے کہ اِن اشعار پر وبال کھڑا کرتے نظر آ رہے ہیں کیونکہ نکتہ چینی کرنے والے خود اردو شاعری میں  بتوں، حرم، ،اور خدا،   یسےاستعاروں کے استعمال سے ہی نا بلد ہیں۔ 

اردو شاعری میں  انقلابی شاعری کرنے والوں کچھ شعرا کا منتخب کلام  استعاروں اور تشبیہات کے استعمال کی عکاسی کرتا ہے۔

علامہ اقبال

اٹھومری دنیا کے غریبوں کو جگادو   ۔    کاخ امراء کے درد دیوار ہلا دو!
گرماؤ غلاموں کا لہو سوزِ یقین سے ۔ کنجشاک فرو مایہ کو شاہین سے لڑادو 

Iqbal
Archive

  جوش نے اپنی مایہ ناز معروف  نظم ’’بغاوت ‘‘ میں  انگریزوں کے خلاف علمِ بغاوت بلند کیا۔  

  اے  جواں  مردوں  خدارا باندھ لو سر سے  کفن ۔ یا تو اب تاج پہنیں  گے  یا خو نی کفن

 جوش ملیح آبادی کا نعرہ شباب 

کام ہے  میرا تغیر نام ہے  میرا شباب

 میرا نعرہ انقلا ب  انقلاب  انقلاب

Josh
supplied

 بسمل عظیم آبادی 

 سرفروشی کی تمنا اب ہمارے دل میں ہے ۔ دیکھنا ہے زور کتنا بازوئے قاتل میں ہے

آج پھر مقتل میں قاتل کہہ رہا ہے بار بار ۔  آئیں وہ شوق شہادت جن کے جن کے دل میں ہے

فیض احمد فیض

جس دیس کے عہدیداروں سے عہدے نہ سنبھالے جاتے ہوں   ۔  جس دیس کے سادہ لوح انساں وعدوں پہ ہی ٹالے جاتے ہوں

اس  دیس  کے ہر اک  لیڈر پر سوال   اٹھانا  واجب  ہے ۔  اس دیس کے ہر اک حاکم کو سولی پہ چڑھانا واجب ہے

Faiz
Getty

حبیب جالب

دیپ جس کا محلات ہی میں جلے چند لوگوں کی خوشیوں کو لے کر چلے وہ جو سائے میں ہر مصلحت کے پلے

ایسے دستور کو صبح بے نُور کو میں نہیں مانتا، میں نہیں مانت

Jalib

Protest

احمد فراز

مرا قلم تو امانت ہے میرے لوگوں کی ۔ مرا قلم تو عدالت مرے ضمیر کی ہے

اسی لیے تو جو لکھا تپاک جاں سے لکھاجبھی تو لوچ کماں کا زبان تیر کی ہے

faraz
Facebook
 اسرار الحق مجاز
 سرکشی کی تند آندھی دم بہ دم چڑھتی ہوئی ۔  ہر طرف یلغار کرتی ہر طرف بڑھتی ہوئی

Majaz

ساحر لدھیانوی         

بم گھروں پر گریں کہ سر حد پر۔ روح تعمیر زخم کھاتی ہے ۔ ٹینک آگے بڑھیں کے پیچھے ہٹیں ۔ کوکھ دھرتی کی بانجھ ہوتی ہے

.  فیض احمد فیض ۔  لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے 

ہم دیکھیں گے، ہم دیکھیں گے ۔ لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے ۔ وہ دن کہ جس کا وعدہ ہے ۔ جو لوحِ ازل میں لکھا ہے
جب ظلم و ستم کے کوہ گراں ۔ روئی کی طرح اُڑ جائیں گے ۔ ہم محکوموں کے پاؤں تلے ۔ یہ دھرتی دھڑدھڑدھڑکے گی
اور اہلِ حکم کے سر اوپر ۔  جب بجلی کڑ کڑ   کڑکے گی ۔  جب ارضِ خدا کے کعبے سےسب بُت اُٹھوائے جائیں گے ۔

 ہم اہلِ سفا مردودِ حرم  ۔    مسند پہ بٹھائے جائیں گے  

سب تاج اچھالے جائیں گے ۔ سب تخت گرائے جائیں گے

بس نام رہے گا اللہ کاجو غائب بھی ہے حاضر بھی ۔ جو ناظر بھی ہے منظر بھی ۔ اٹھّے گا انا الحق کا نعرہ 
جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو ۔ اور راج کرے گی خلقِ خدا ۔ جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو ۔ لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے۔۔۔

Image Source: The citizen archive of Pakistan

Coming up next

# TITLE RELEASED TIME MORE
’ جب تاج اچھالے جائیں گے‘ 02/01/2020 12:20 ...
طلسمِ ہوشربا کا جادو اب انگریزی میں 27/02/2020 11:21 ...
ایس بی ایس اردو خبریں ۲۷ فروری 27/02/2020 11:21 ...
آنکھوں کا معائینہ اہم کیوں؟ 26/02/2020 10:46 ...
ہر سکھیاں ۔ تین بہنوں کی صوفی گائیگی کا سفر 26/02/2020 14:03 ...
سیاحت میں اضافہ ہوگیا، اب مرحلہ ہے ذمہ داری کا۔ 25/02/2020 08:16 ...
سلام فیسٹیول ۲۰۲۰۔ میلبورن میں اسلامی ثقافت کا رنگا رنگ میلہ 25/02/2020 08:50 ...
ایس بی ایس اردو خبریں ۲۴ فروری ۲۰۲۰ 24/02/2020 14:55 ...
ہائر کار کیا ہوتی ہے اور کیسے کام کرتی ہے؟ 21/02/2020 10:05 ...
ایس بی ایس اردو خبریں ۲۰ فروری ۲۰۲۰ 21/02/2020 14:59 ...
View More