ابھی آنے والا ہے Sun 6:00 PM  AEST
ابھی آنے والا ہے شروع ہوگا 
Live
Urdu radio

"دنیا کو طالبان کے نئے نرم روپ کے جھانسے میں نہیں آنا چاہیے" ایوارڈ یافتہ فوٹو جرنلسٹ کا انتباہ

Barat Ali Batoor fled Afghanistan in 2012. Source: SBS News

برات علی بتور پیشے کے لحاظ سے ایک فوٹو جرنلسٹ ہیں اور فلم میکر ہیں اور اس وقت اسائلم سیکر ریسورس سنٹر میں وہ بطور آرگنسئزر کام کرنے کے ساتھ ساتھ وہ آر ایم آئی ٹی میں فوٹو جرنلزم بھی پڑھا رہے ہیں۔ بتور خود بھی افغانستان سے تعلق رکھتے ہیں اور طالبان کے افغانستان کے حالیہ اقتدار کے بارے میں وہ کچھ تحفظات رکھتے ہیں۔

ایس بی ایس اردو سے بات کرتے ہوئے افغانستان کی موجودہ صورتحال پر  بتور کا کہنا ہے کہ اس وقت افغانستان میں لوگ پریشان ہیں اور خاص طور پر وہ لوگ جنہوں نے طالبان کے ہاتھوں ظلم سہا ہے وہ خوف کا شکار ہیں ۔ اس بارے میں ان کا مزید کہنا تھا کہ اس وقت ہزارہ کمیونٹی جن کا سب سے زیادہ طالبان نے اس سے قبل قتل عام کیا تھا انہیں اس وقت پناہ کی ضرورت ہے اور اسی لیے 20000 لوگوں کو بچانے کے لیے آواز اٹھائی جارہی ہے۔

آسٹریلیا کی انخلا اور پناہ سے متعلق سوال پر بتور کا کہنا تھا کہ ہماری حکومت سے یہی اپیل تھی کہ جن لوگوں کی جان کو زیادہ خطرہ ہے انہیں فوری طور پر افغانستان سے نکالا جائے۔ دوسری جانب جو لوگ یہاں پر پہلے سے عارضی پناہ گزین ویزوں پر موجود ہیں یا نغیر کسی ویزے کے یہاں ہیں انہیں مستقل کیا جائے تا کہ ان کے سر پر واپسی کی لٹکی تلوار ہٹ سکے۔ اس کے علاہ جن لوگوں کی فیملیز اس وقت افغانستان میں پھنسی ہیں اور ان کو طالبان کے فورا قبضے کی وجہ سے موقع نہیں مل سکا کہ وہ وہاں سے نکل سکیں ان کو بھی وہاں سے نکالا جا سکے۔

Barat Ali Batoor
Barat Ali Batoor
Courtesy: Mr Batoor

حکومت کی جانب سے 3000 افغانیوں کو ویزہ دینے کا اعلان کیا گیا تھا۔ اس پر تبصرہ کرتے ہوئے بتور نے کہا کہ وزیر اعظم کی جانب سے یہ ایک سیاسی بیان ہے۔  ان کا کہنا ہے کہ جو 13000 مختص پناہ گزینوں کا کوٹہ ہے جو  پہلے سےبھی کم ہے اور اس میں سے 3000 ویزہ دینے کی بات کی جا رہی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اس کوٹے کے علاوہ بھی 20000 لوگوں کو پناہ دی جائے۔

بتور کے مطابق افغانستان میں سیاسی اور فوجی طور پر ملوث تمام ممالک کو یہ ذمہ داری پوری کرنی چاہیے۔ نیٹو اور باقی ممالک کا افغانستان کی ناکامی میں کردار رہا ہے اور غلط فیصلوں کی وجہ سے افغانستان میں عام آدمی کو آج یہ دن دیکھنے پڑ رہے ہیں۔ اس لیے ان مہاجرین کو پناہ دینے میں بھی ان ممالک کو اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ 

international airport in Kabul, Afghanistan.
FILE - In this Aug. 16, 2021, file photo, hundreds of people gather near a U.S. Air Force C-17 transport plane at international airport in Kabul, Afghanistan
AP Photo/Shekib Rahmani

کرپشن اور موجودہ صورتحال میں تعلق کے باری میں بتورسمجھتے ہیں کہ امریکہ کی ایک مخصوص طبقے یا شخص کو مضبوط بنانے کی پالیسی پہلے دن سے ہی غلط رہی ہے۔ ان کا ماننا ہے کہ افغانستان مختلف نسلوں کا ملک ہے جن میں تاجک، ہزارہ. افغان، ازبک اور بے شمار قومیتیں آباد ہیں جن میں اقلیتیں بھی ہیں اور ان کے ساتھ پہلے دن سے زیادتی ہوتی رہی ہے۔

علاوہ ازیں ان کا ماننا ہے کہ امریکہ نے پہلے دن سے کرپٹ سیاست دانوں کو سپورٹ کیا انہیں پیسا دیا گیا لہذا ان کے دعوے پہلے دن سے غلط ہیں۔ ان کے مطابق امریکہ وہاں کے انتخابات میں نا صرف دخل اندازی کرتا رہا ہے بلکہ اشرف غنی کو دو مرتبہ ہارنے کے باوجود صدر بنایا گیا۔

طالبان کے رویے کے بدلے جانے اور عاشور کے جلوس کی اجازت دینے کے بارے میں بتور نے بتایا کہ کچھ ہفتوں قبل جب اسپن بلدک کے علاقوں اور ہزارہ برادی کے علاقوں میں قبضہ کرنے کے بعد انہوں نے وہاں پر موجود افغان کمانڈوز کا بے دردی سے قتل کیا۔ اس لیے وہ سمجھتے ہیں کہ وہ نہیں بدلے۔ صرف اس وقت چونکہ پوری دنیا کی نظر وہاں پر لگیں ہیں اس لیے وہ چاہتے ہیں کہ ان کی حکومت کو تسلیم کیا جائے اس لیے ایک سافٹ امیج دنیا کو دکھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

Defecting Taliban fighters sit on a tank as they cross the frontline near the village of Amirabad, northern Afghanistan (2001).
Defecting Taliban fighters sit on a tank as they cross the frontline near the village of Amirabad, northern Afghanistan (2001).
AP

بتور کے مطابق طالبان کو مضبوط بنانے میں امریکہ کا بڑا ہاتھ ہے اور دوحا ڈیل کے بعد طالبان نے اپنے آپ کو ایک فاتح کے طور پر سامنے آئے ہیں اور امریکہ کی اس ڈیل کو وہ سمجھتے ہیں کہ طالبان کی حکومت کو امریکہ نے تسلیم کر لیا ہے۔ ان کے مطابق اب طالبان اپنا اصلی رنگ و روپ دکھائیں گے۔

عبداللّہ عبداللّہ اور حامد کرزئی کے باری میں بتور کا کہنا ہے کہ انہوں نے ہی سب سے پہلے طالبان کو تسلیم کرنے میں کردار ادا کیا ہے اور یہ سب لوگ ایک پیج پر موجود ہیں اور افغانستان کی حالیہ صورت حال کے ذمہ دار ہیں۔



 

Coming up next

# TITLE RELEASED TIME MORE
"دنیا کو طالبان کے نئے نرم روپ کے جھانسے میں نہیں آنا چاہیے" ایوارڈ یافتہ فوٹو جرنلسٹ کا انتباہ 30/08/2021 09:39 ...
آسٹریلین چئیرٹی بینائی سے محروم پاکستانیوں کے لئے روشنی کی امید 26/05/2022 00:15 ...
آسٹریلیا کی نجی ائیرلائن نے ماں بیٹی کا سڈنی کا سفر مزیدار بنا دیا 26/05/2022 38:10 ...
SBS Urdu News 26 May 2022 26/05/2022 03:31 ...
Urdu News Wed 25 May 2022 25/05/2022 10:50 ...
موسیقی، فن مصوری اور تھیٹر: آسٹریلین پاپ کلچر کی خوبصورت روایات 25/05/2022 12:50 ...
ایس بی ایس اردو خبریں 24 مئی 2022 24/05/2022 03:59 ...
ڈلیوری سروس ڈور ڈیش کا گگ ورکرز کے لیےٹرانسپورٹ ورکرز یونین سے معائدہ 24/05/2022 06:31 ...
SBS Urdu News 23 May 2022 23/05/2022 04:00 ...
Labor party ready to form the next Australian parliament after winning the 2022 election-Urdu News 22 May 2022 22/05/2022 10:30 ...
View More